امریکن پاکستانی پبلک افئیرز کمیٹی کا کیلی فورنیا سے لیفٹنٹ گورنر کے امیدوار ڈاکٹر آصف محمود کی مکمل حمایت کا اعلان

 

نیویارک (پ ر ) پاکستانی امریکن کمیونٹی کی ایک اہم و نمائندہ تنظیم امریکن پاکستانی پبلک افئیرز کمیٹی (APPAC)کی جانب سے امریکہ کی سب سے بڑی ریاست کیلی فورنیا سے لیفٹنٹ گورنر کا الیکشن لڑنے والے پاکستانی نژاد امریکی ڈاکٹر آصف محمود کی مکمل حمایت کے ساتھ ایسٹ سے لیکر ویسٹ کوسٹ تک بسنے والے کمیونٹی پر زور دیا گیا ہے کہ امریکی سیاست میں بڑا سیاسی قدم اٹھانے والے ڈاکٹر آصف محمود کی ہر ممکن سپورٹ کرتے ہوئے ان کی کامیابی کو یقینی بنایا جائے تاکہ موجودہ اور آنیوالی نسلوںکے لئے امریکی سیاسی نظام کے قومی دھارے میں کمیونٹی ارکان کی موثر نمائندگی کا ایک سلسلہ شروع ہو۔
ڈاکٹر آصف محمود کے اعزاز میں APPACکے چئیرمین ڈاکٹر اعجاز احمد کی رہائشگاہ پر فنڈ ریزنگ برنچ کا اہتمام کیا گیا جس میں تنظیم کے بورڈ ممبرز کے علاوہ کمیونٹی کی مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی اہم شخصیات نے بڑی تعداد میں شرکت کی اور کہا کہ جون 2018میں ہونیوالے ان کے الیکشن تک وہ ان کی ہر ممکن سپورٹ کریں گے ۔
تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر آصف محمود نے اپنا پس منظر بیان کرتے ہوئے کہا کہ میں پاکستان میں ایک چھوٹے سے گاو¿ں میںایسی خاندان میں پیدا ہوا کہ جو محدود وسائل کے ساتھ گذر بسر کرتا تھا۔میں نے ٹاٹوں پر بیٹھ کر بغیر چھت کے سکولوں میں تعلیم حاصل کی ۔میرے والد نے ہر طرح کے حالات کا مقابلہ کرتے ہوئے مجھے ڈاکٹر اس لئے نہیں بنایا کہ میں زیادہ پیسہ کماو¿ں بلکہ اس لئے یہ پیشہ اختیار کیا کہ اس میں آپ معاشرے کا ایک حصہ بن کر خدمت خلق کرسکتے ہیں ۔انہوںنے کہا کہ میں نے امریکہ منتقل ہونے کے بعد کیلی فورنیا میں اپنی عملی زندگی کا آغاز کیا ۔میں نے پیشہ وارانہ فرائض کے ساتھ ساتھ مختلف شعبوں میں بلا امتیاز کمیونٹی خدمات انجام دینے کا سلسلہ شروع کیا ۔ڈاکٹر آصف محمود نے کہا کہ میری کبھی کسی عہدے کےلئے الیکشن لڑنے کی خواہش نہیں رہی ۔مجھ پر اللہ کا بہت کرم ہے ۔بہت خوبصورت فیملی ہے ، بطور ڈاکٹر اچھی پریکٹس اور مخلص دوستوں کا ساتھ ہے لیکن میرے اندر خدمت اور مدد کا ایک جذبہ ہمیشہ محسوس ہوتا تھا کیونکہ میں نے زندگی میں مشکل حالات دیکھے تھے ۔خدمت خلق کا بہترین طریقہ سیاست میں عملی کردار ادا کرنا ہے ۔

 

 


ڈونلڈ ٹرمپ نے بطور امیدوار جس طرح رنگ و نسل اور عقیدے کی بنیاد پر مبالغہ آرائی سے کام لیا تو سمجھا جا رہا تھا کہ شاید یہ انتخابی سیاست ہے لیکن فری ورلڈ اور امریکہ کا صدر کہ جن کا اولین فرض ملک و قوم کو یکجا رکھتے ہوئے آگے بڑھنا ہوتا ہے ، نے اپنے انتخابی ایجنڈے کو جس انداز میں آگے بڑھایا ، وہ ہمارے لئے باعث تشویش ہے ۔امتیاز ی سلوک کا مظاہرہ کرتے ہوئے ایگزیکٹو آرڈرز جاری کئے گئے، اوبامہ کئیر کے خاتمہ کےلئے بھرپور اقدام کئے جا رہے ہیں جس کے نتیجے میں 25ملین امریکن اور صرف کیلی فورنین میں پانچ ملین لوگ ہیلتھ انشورنس سے محروم ہو جائیں گے ۔یہ وہ لمحات تھے کہ جب میں نے عملی سیاست میں سامنے آنے ، مزاحمت اور چیلنجوں کے سامنے کھڑے ہونے کا فیصلہ کیا ۔ایسا کرنا مجھ سے زیادہ آپ کے لئے اہم ہے ۔میری انتخابی مہم میری یا آپ کی نہیںبلکہ ہم سب کی مہم ہے ۔کیلی فورنیا نے ہمیشہ امریکی سیاست میں ایک قائدانہ کردار ادا کیا ہے ، کیلی فورنیا اپنا یہ کردار ان لوگوں کے خلاف ادا کرنے کے لئے تیار ہے کہ جو امریکی معاشرے میں مخصوص طبقو ں کو دبا کر رکھنا چاہتے ہیں اور ان کی آوازوں کو خاموش کرنا چاہتے ہیں ۔ اسی کردار نے میری حوصلہ افزائی کی ۔مجھے پورا یقین ہے کہ ہم کامیاب ہونگے لیکن اس سفر میں آپ لوگوں کا ساتھ ہر قدم پر درکار ہے ۔
APPACکے چئیرمین ڈاکٹر اعجاز احمد نے کہا کہ ڈاکٹر آصف محمود وہ شخص ہیں کہ جن پر ہم سب کو فخر ہے اور ہم انہیں سپورٹ کرتے ہیں ۔گذشتہ سال جب میں سیاسی طور پر متحرک ہوا تو سب سے پہلا نام ڈاکٹر آصف محمود کا سننے کو ملا۔39ملین آبادی پر مشتمل کیلی فورنیا ، امریکہ کی سب سے بڑی ریاست ہے ۔بیشتر اوقات کیلی فورنیا امریکی سیاست میں ایک رجحان ساز ریاست کا کردار ادا کرتی ہے ۔ ایسی ریاست میں لیفٹنٹ گورنر کے عہدے کےلئے ڈاکٹر آصف محمود کا سیاسی میدان میں سامنے آنا اہم پیش رفت ہے ۔ وہ اگر لیفٹنٹ گورنر منتخب ہوتے ہیں تو مستقبل میں گورنر بھی بن سکتے ہیں کیونکہ اس ریاست میں دس لیفٹنٹ گورنر ایسے رہے کہ جو آگے جا کر گورنر کیلی فورنیا بنے ۔یہ وہ ”گیم چینجر “ لمحات ہیں کہ جن کا ہمیں انتظار تھا۔
APPACکے چئیرمین کی حیثیت سے میں سمجھتا ہوں کہ جون 2018میں ہونیوالے ڈاکٹر آصف کے الیکشن سے زیادہ اہم کوئی مقابلہ نہیں ہو سکتا ۔ہمیں ان کے نقش قدم پر چلتے ہوئے امریکہ کی مین سٹریم سیاست میں متحرک کردار ادا کرنا ہے ، ہمارے اس کردار کے اہم و مثبت اثرات مرتب ہونگے ۔اس وقت ڈاکٹر محمود اپنے سیاسی حریفوں سے تازہ ترین پولز کے مطابق 15فیصد آگے ہیں ، صرف پولز سے الیکشن نہیں جیتے جا تے ، امیدوار وں کو مالی ، افرادی ،کمیونٹی کی سپورٹ چاہئیے ۔اس سلسلے میں ہمیں اپنا فرض ادا کرنا ہے ۔
ڈاکٹر پرویز اقبال نے کہا کہ ڈاکٹر آصف محمود پاکستانی ، امیگرنٹ کمیونٹی کی تاریخ میں وہ باب لکھنے جا رہے ہیں کہ جس پر ہماری ہی نہیں بلکہ ہماری آنیوالی نسلوں پر بھی گہرے اثرات مرتب کرے گا ۔ وہ ثابت کرنے جا رہے ہیں کہ ہمارے اندر ایسے افراد موجود ہیں کہ جو نا انصافی کے خلاف کھڑے ہوسکتے ہیں ۔ مجھے فخر ہے کہ ڈاکٹر آصف محمود ہم سب کے لئے کھڑے ہوئے ہیں ۔ وہ نفرت ، نا انصافی اور امتیازی سلوک کے خلاف کھڑے ہوئے ہیں ۔ وہ انصاف اور مساوات کےلئے کھڑے ہوئے ہیں ۔ ہم انہیں کیلی فورنیا جا کر بھی سپورٹ کریں گے

 

 


اسلم بیگ جنہوں نے نظامت کے فرائض بھی انجام دئیے نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ APPACمقصد نیویارک سے کیلی فورنیا تک پاکستانی امریکن کمیونٹی کو متحرک کرنا ہے۔
آصف چوہدری نے کہا کہ APPACکا قیام اس بصیرت کو پیش نظر رکھ کر کیا گیا کہ ہم امریکی سیاست کے قومی دھارے میں شامل ہو کر اپنا موثر اور فعال سیاسی کردار ادا کرنا ہے ۔ حوصلہ کن اور خوشی کی بات یہ ہے کہ ہم میں سے ہی ایک ڈاکٹر آصف محمود امریکہ کی سب سے بڑی ریاست کیلی فورنیا میں لیفٹنٹ گورنر کے امیدوار کے طور پر سامنے آگئے ہیں ۔ ہمارا سفر منزل کی طرف شروع ہو گیا ہے ۔ ہم مل کر آگے بڑھنا ہے ۔
اجمل چوہدری نے کہا کہ خوشی کی بات ہے کہ نئے چہرے ، نئے لوگ کمیونٹی کی روایتی سیاست سے ہٹ کر بامقصد کاز کو پیش نظر رکھتے ہوئے سامنے آرہے ہیں ۔ اگر ہم نے اس معاشرے میں آنیوالے وقت میں اپنا کو ئی بہتر مستقبل بنانا ہے تو ان نئے چہروں کو سپورٹ کرنا ہوگا۔یہی لوگ آگے جا کر کونسل مین، کاو¿نٹی ایگزیکٹو ز ،ارکان کانگریس بنیں گے ۔ ڈاکٹر آصف محمود نے بڑا قدم اٹھایا ہے ، کمیونٹی اس حیثیت میں ہے کہ وہ ان کا ساتھ دے ۔
انجنئیر نور محمد نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ APPACکے قیام سے کمیونٹی میں موجود ایک کمی پوری کر دی گئی ہے ۔اس تنظیم کا مقصد کہ کمیونٹی کو امریکہ کے معاشرتی ، سماجی و سیاسی نظام کے قومی دھارے میں شامل کیا جائے ، دراصل ہم سب کی ضرورت اور وقت کا تقاضہ ہے ۔اگرچہ ہمیں مشکل حالات کا سامنا ہے تاہم اچھی بات یہ ہے کہ مخلص لوگ ہمارے حقوق اور کمیونٹی کے تحفظ کے لئے سیاسی میدان میں سامنے آرہے ہیں ، ہم سب کو انہیں سپورٹ کرنا چاہئیے ۔

تاریخ اشاعت : 2017-05-19 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock