روہنگیا مسلمانوں کے مظالم کیخلاف ٹائمز سکوائر نیویارک پر احتجاجی مظاہرہ

نیویارک (خصوصی رپورٹ ) نیویارک ٹرائی سٹیٹ ایریا کی مسلم امریکن کمیونٹی نے گذشتہ ہفتے شہر کے مصروف ترین علاقے ٹائمز سکوائر پر برما کے روہنگیا مسلمانوں پر ہونیوالے مظالم اور جبری ملک بدری سمیت انہیں درپیش حالات و واقعات کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا،امریکہ ، اقوام متحدہ ، عالمی برادری سمیت انسانی حقوق کی تنظیموں سے مطالبہ کیا کہ وہ صورتحال کا نوٹس لیں اور فوری طور پر ہر ممکن کردار ادا کریں ۔


احتجاجی مظاہرے کا اہتمام پاکستانی امریکن کمیونٹی کی ممتاز سماجی تنظیموں برونکس کمیونٹی کونسل کے شبیر گل اور امریکن ویمن مینارٹی کونسل کی بازہ روحی سمیت ان کے ساتھیوں نے کلیدی کردار ادا کیا ۔

 

احتجاجی مظاہرے میں مسلم امریکن کمیونٹی کی مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی اہم تنظیموں اکنا ، پاکستان لیگ آف یو ایس اے ، پاکستان لیگ آف امریکہ ، مسلم ڈے پریڈ، پاکستان ڈے پریڈ، جعفرئیہ کونسل ، پاکولی ، پاکونی، پسنی ، پاکستان عوامی تحریک،پی ٹی آئی، پاکستان مسلم لیگ (ن) امریکہ ، پاکستان پیپلز پارٹی یو ایس ا ے، اہل سنت ، پران گروپ،علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر، ون نیشن، مسلم کولیشن ، ویسٹ چیسٹر مسلم سنٹر، خیبر سوسائٹی، اے این پی امریکہ ، فریڈم فورم، آل پاکستان مسلم لیگ ، منہاج القران ،النور اسلامک سنٹر، سکھی نیویارک و دیگرتنظیموں اور ان کے قائدین اور ارکان نے شرکت کی ۔


ٹائمز سکوائر جو کہ نیویارک سٹی کا مصروف ترین علاقہ ہے ، پر ویک اینڈ کو ہونے والا یہ احتجاجی مظاہرہ ہزاروں راہ گیروں کی توجہ کا مرکز بنا رہا ۔مظاہرین نے اپنے ہاتھوں میں پلے کارڈز، بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر روہنگیا مسلمانوں پر ہونے والے مظالم اور ظلم ڈھانے والی بدہسٹ قوم کے عناصر کے خلاف نعرے درج تھے ۔

 

مظاہرین نے روہنگیا مسلمانوں سے اپنی مکمل یکجہتی کا اظہار بھی کیا اور کہا کہ وہ ان پر ہونے والے مظالم کے خلاف اس وقت تک آواز بلند کرتے رہیں گے جب تک کہ یہ سلسلہ رک نہیں جاتا ۔


احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے مذکورہ تنظیموں کے قائدین نے کہا کہ اقوام متحدہ، امریکہ اور عالمی برادری تاریخ کے اس بدترین ظلم پر خاموش یا محض بیان بازی نہ کرے بلکہ ایسے اقدام کرے کہ جو نہ صرف نظر آئیں بلکہ ان اقدامات کے نتائج بھی برامد ہوں ۔ مقررین نے کہا کہ مظالم کا یہ سلسلہ فوری طور پر بند ہونا چاہئیے ۔روہنگیا کے مسلمانوں کو انکے وطن میں آزاد شہریوں کی طرح رہنے کی مکمل آزادی ہونی چاہئیے اور اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق ان کے انسانی و بنیادی حقوق کو یقینی بنانا چاہئیے ۔
مقررین نے انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں کو بھی شدید تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ گذشتہ کئی سالوں سے تاریخ کا روہنگیا مسلمانوں پر بدترین ظلم ہو رہا ہے اور انسانی حقوق کے چیمپئین کا کوئی قابل ذکر کردار نظر نہیں آیا ۔ ان کو دوہرے معیار نہیں اپنانے چاہئیے


احتجاجی مظاہرے میں پاکستانی، بنگلہ دیشی ، انڈین، افریقین ، عرب کمیونیز کے علاوہ دیگر کمیونٹیز کے قائدین اور ارکان شریک ہوئے تاہم پاکستانی کمیونٹی کے بعض قائدین جو کہ بڑی بڑی باتیں کرتے ہیں، وہ مظاہرے میں شریک نہیں ہوئے ۔ان کی عدم شرکت کو بھی مظاہرے کے شرکاءنے تنقید کا نشانہ بنایا اور کہ یہ نام نہاد لیڈر فائیو سٹار ہوٹل میں ہونے والے فنکشن میں اپنی بیگمات کے ساتھ سج دھج کر شریک ہوتے ہیں لیکن ظلم کے خلاف آواز اٹھانے کے لئے ایسے مظاہروں میں شرکت کی بجائے ویک اینڈ مناتے رہتے ہیں۔

تاریخ اشاعت : 2015-06-17 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں

SiteLock