اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹ اور پارلیمنٹ میں نمائندگی دی جائے ؛ اوورسیز رائٹس موومنٹ کا آغاز

 

کمیونٹی کی مختلف سیاسی و سماجی تنظیموں کے قائدین نے متفقہ طور پر مطالبہ کیا ہے کہ آئندہ الیکشن میں نہ صرف اوورسیز پاکستانیوں کو اوورسیز میں ووٹ ڈالنے کا حق دیا جائے بلکہ پاکستان کے منتخب نمائندوں میں ان کی نمائندگی کو بھی یقینی بنایا جائے


اوورسیز ووٹرز رائٹس موومنٹ کے قیام کا مقصد کمیونٹی کو ایک پلیٹ فارم پر متحد کرنا اور اوورسیزپاکستانیوں کے حق رائے دہی اور ایوانوں میں ان کی نمائندگی کو یقینی بنانے کے سلسلے میں مشترکہ و متحدہ لائحہ عمل مرتب کرنا اور کوششوں کو آگے بڑھانا ہے ؛ فیاض خان


نیویارک(محسن ظہیر سے ) پاکستانی امریکن کمیونٹی کے مختلف سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھنے والے قائدین اور مختلف سماجی تنظیموں اور مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی تنظیموں کے قائدین نے متفقہ طور پر مطالبہ کیا ہے کہ آئندہ الیکشن میں نہ صرف اوورسیز پاکستانیوں کو اوورسیز میں ووٹ ڈالنے کا حق دیا جائے بلکہ پاکستان کے منتخب نمائندوں میں ان کی نمائندگی کو بھی یقینی بنایا جائے ۔ یہ متفقہ مطالبہ کمیونٹی کی نمائندہ شخصیات و قائدین نے کمیونٹی کی اہم تنظیم اوورسیز ووٹرز رائٹس موومنٹ کے صدر فیاض خان کے زیر اہتمام گورمے ریسٹورنٹ میں منعقدہ اجلاس میں کیا گیا جس کے انعقاد میں ویکلی پاکستانی نیوز کے مجیب لودھی ، صحافی سلیم ملک اور ان کے ساتھیوںنے بھی اہم کردار ادا کیا ۔ اجلاس میں ذاکر صدیقی، روحیل ڈار، بشیر قمر، اجمل چوہدری ، ظفر سپرا،ارشد خان ، آغا افضل خان، چوہدری ضمیراحمد ،چوہدری پرویز امرائ، راجہ رزاق پران ،نسیم خان علی زئی ، شمس الزمان ، اشرف اعظمی، طاہر خان، فضل حق سید ، فریدہ خان، سید قسیم واسطی ، سعید اختر، طاہر خان ، طالب حسین ، زمان آفریدی، ڈاکٹرشفیق، ظفر ،محمد حسین ایڈووکیٹ، اجمل چوہدری، سلمان ظفر ، بشیر قمر، شیخ توقیر الحق ، سیدجمال محسن ، عارف سہیل ،قدیر ملک، علمدار ،ہمایوں شبیر، وسیم سید سمیت دیگر نے شرکت کی ۔تقریب میں نظامت کے فرائض ملک سلیم نے ادا کئے ۔


اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے فیاض خان نے اوورسیز ووٹرز رائٹس موومنٹ کے قیام کا مقصد کمیونٹی کو ایک پلیٹ فارم پر متحد کرنا اور اوورسیزپاکستانیوں کے حق رائے دہی اور ایوانوں میں ان کی نمائندگی کو یقینی بنانے کے سلسلے میں مشترکہ و متحدہ لائحہ عمل مرتب کرنا اور کوششوں کو آگے بڑھانا ہے ۔
ویکلی پاکستان نیوز ایڈیٹر کے پبلشر مجیب لودھی نے کہا کہ ایک عرصے سے اوورسیز پاکستانی کوشش کررہے ہیں کہ ان کے ووٹنگ رائٹس اور ایوان اور گورنمنٹ میں ان کی نمائندگی کے حوالے سے اقدامات لئے جائیں ۔کمیونٹی کی جانب سے آخری وقت پر کوششیں شروع کی جاتی ہیں لیکن اس بار یہ کوشش بروقت شروع کی گئی ہے ۔ ان کوششوں کو ان نتیجہ خیز بنانا ہے۔

 


پاکستان مسلم لیگ (ن) یو ایس اے کے صدر روحیل ڈارنے کہا کہ اوورسیز پاکستانیز کو اگر ووٹ دینے اکا حق ہونا چاہئیے تو انہیں ور ووٹ لینے دونوں کا حق بھی ہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت کی جانب سے اوورسیز پاکستانیوں کے مسائل کے حل کے لئے کمیشن قائم کیا گیا ہے جس میں امریکہ اور برطانیہ سمیت اوورسیز سے کمیونٹی کے نمائندوں کو شامل کیا جائے گا۔ روحیل ڈار نے کہا کہ ہم پاکستان زرمبادلہ بھجواتے ہیں، اپنے والدین ،عزیز و اقارب کی مدد کرتے ہیں۔ یقینا ہمارے زرمبادلہ سے ملک و قوم کی بڑی مدد ہوتی ہے لیکن ہمیں اس زرمبادلہ کا حوالہ دے کر کوئی مطالبہ نہیں کرنا چاہئیے ۔ اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹ اور الیکشن دونوں کا حق ہونا چاہئیے اور ان کا حلقہ نیابت بھی الگ سے ہونا چاہئیے ۔

 


پاکستان عوامی تحریک امریکہ کے میڈیا کوارڈی نیٹر ارشد خان نے کہا کہ اووسیز پاکستانیوں کی حب الوطنی پر کسی کو شک کرنے کا کسی کو کوئی حق نہیں اووسیز دنیا میں پاکستان کے سفیر ہیں ۔ ان کو ان کے ملک میں عزت اور مقام ملنا چاہئیے ۔ملک سلیم نے کہا کہ فورم کا مقصد اووسیز پاکستانیوں کے حق رائے دہی اور نمائندگی کے حوالے سے پاکستانی قانون ساز کو رہنمائی اور مشاورت اور اپنی آراءسے آگاہ کرنا ہے ۔


 پاکولی کے چئیرمین ذاکر صدیقی نے کہا کہ پاکستانی سیاستدانوں کے لیے اووسیز پاکستانیوں کی حیثیت ٹوائلٹ پیپر سے زیادہ نہیں۔ انہوں نے کہا کہ چین کی طرح پاکستانی اوورسیز ملک و قوم کی تقدیر بدل سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمیں متحد ہو کر اپنا کردار ادا کرنا ہوگا تبھی جا کر ہم اپنے مقاصد حاصل کر پائیں گے۔


پاکستان پیپلز پارٹی یو ایس اے کی رہنما محترمہ فریدہ خان نے کہا کہ پاکستان میں نئی آنیوالی حکومت سابقہ حکومت کے منصوبوں کو بند کرنے کا سلسلہ بند کرے۔اوورسیز پاکستانیوںکو ملک میں اپنی رائے دینے کا پورا حق ہونا چاہئے۔پاکستان مسلم لیگ ن یوتھ ونگ کے کوارڈی نیٹر راجہ رزاق پران نے کہا کہ وزیر اعظم میاں نواز شریف کی جماعت پاکستان مسلم لیگ ن نے پنجاب کے گورنر کےلئے سرور چوہدری کا اور رکن قومی اسمبلی بیگم شکیلہ لقمان کا اورسیز پاکستانیوں سے انتخاب کیا ۔اوورسیز پاکستانیوں کے کردار کے لئے مزید اقدام بھی کئے جائیں گے۔


پاکستانی امریکن کمیونٹی آف نیویارک (پاکونی) کے رہنما طاہر میاں نے کہا کہ ووٹ کادوسرا نام پاور ہے۔ ووٹ کے رائٹس کے لیے لابنگ کرنی چاہئے باتوں سے زیادہ عمل ضروری ہے ۔


پاکولی کے صدر سیدجمال محسن نے کہا کہ پاکستانیوں کو اپنی رائے دینے کا حق حاصل ہونا چاہئے ۔انہوں نے کہا کہ پاکولی تنظیم کی ہمیشہ یہ کوشش ہے کہ کمیونٹی ہر پلیٹ فارم پر اپنی نمائندگی کرے۔ اس سلسلے میں کمیونٹی میں تحریک اور آگاہی پیدا کرنے کے سلسلے میں ہم اپنا کردار ادا کرتے رہتے ہیں۔


امریکہ کے دورے پر آئے ایک بیوروکریٹ راجہ طارق نے کہا کہ سب سے بڑی رکاوٹ سپریم کورٹ کا وہ فیصلہ ہے کہ جس کے تحت دوہری شہریت کے حلف کے مسئلہ پر رکنیت پر پارلیمنٹ کی رکنیت پر پابندی عائد کی گئی ۔

انہوں نے کہا کہ اوور سیز پاکستانیوں کو قومی اسمبلی میں مخصوص نشستوں کا مطالبہ کرنا چاہئے سپریم کورٹ پہلے ہی ووٹ کا حق مان چکی ہے ۔
معروف قانون دان و کمیونٹی کی ممتاز سماجی شخصیت سعید شیخ نے کہا کہ ہر پاکستانیوں کو ووٹ کا حق ہے۔ اسمبلی میں نمائندگی کے لیے قانون سازی کی ضرورت ہے ۔جب تک قانون سازی یا آئینی ترامیم نہیں ہوں گی ، اس وقت تک کچھ نہیں ہوگا

 


جہانگیر شیخ نے کہا کہ تجویز ہے کہ اس مہم کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے قرارداد منظور کرکے پاکستان میں ارباب اختیار تک پہنچائیں ۔
پاکستانی امریکن کرسچئن کمیونٹی کے رہنما جیمز سپرئین نے کہا کہ میں کرسچیئن کمیونٹی کی جانب سے اجلاس کے فیصلوں کی تائید کرتا ہوں ۔انہوں نے کہا کہ اوورسیز پاکستانی ، پاکستان میں عیسائی اقلیتوں کے تشویشناک امور کے حوالے سے بھی آواز بلند کریں اور اپنا کردار ادا کریں ۔


پاکولی کے بانی بشیر قمر نے کہا کہ جب بھی آنکھ کھلے سمجھیں اس وقت سویرا ہو گیا ہے۔پاکستان میں جدید ووٹنگ نظام کے تحت ووٹ ڈالے جاسکتے ہیں۔ اوورسیز پاکستانیوں کے ووٹ اور نمائندگی کے لیے ایک نظام کی ضرورت ہے اوورسیز پاکستان ی حکومت پاکستان کو ووٹ کا جدید نظام کی فراہمی میں مدد گار ثابت ہوسکتے ہیں۔


پاکستانی امریکن سوسائٹی آف نیویارک کے سیکرٹری جنرل اشرف اعظمی نے کہا کہ اوورسیز پاکستانی سولہ ارب ڈالرز زرمبادلہ ہر سال بھیجتے ہیں۔بیرون ممالک میں یہ ہر قسم کے تعصبات سے بالاتر ہو کر مل جل کر رہتے ہیں ۔ پاکستانی کی روایتی سیاسی قیادت ہم اوورسیز پاکستانیوں کو ایبولا وائرس سمجھتی ہے ۔ اس لئے وہ اوورسیز پاکستانیوں کو کبھی مقام حاصل نہیں کر نے دیں گے۔ ہمیں کسی پر انحصار کئے بغیر اپنا مقام خود پیدا کرنا ہے ۔


پاکستان مسلم لیگ (ق) امریکہ کے رہنما آغا افضل خان نے کہا کہ ہم اوورسیز پاکستانی متحد ہو جائیں تو ہمارے بیشتر مسائل از خود حل ہو جائیں ۔مجھے یقین ہے کہ ہم ایک آواز ہو کر ایک پلیٹ فارم سے کوئی آواز اٹھائیں تو حکمران اقدام کرنے پر مجبور ہو جائیں گے ۔


پاکستانی ووٹرز ایسوسی ایشن کے چئیرمین نسیم خان علی زئی نے کہا کہ پاکستان میں اوورسیز پاکستانیوں کے بارے میں اچھے خیالات نہیں رکھے جاتے ۔ میں نے یہاں تک سنا ہے کہ یہ اوورسیز پاکستانی سیکورٹی رسک ہیں ۔میرا ایمان ہے کہ اوورسیز پاکستانی ملک و قوم سے اٹھارہ کروڑ عوام سے زیادہ محبت کرتے ہیں ۔ پاکستانی حکمران ورلڈ بنک اور آئی ایم ایف سے چند ملین ڈالرز کے قرضے لینے کے لئے ان کے سامنے جھکنے کی بجائے اوورسیز پاکستانیوں کے بارے میں مخلصانہ پولیسی اپنائے۔


پاکستانی امریکن کونسل کے اجمل چوہدری نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہماری نسلیں امریکہ سمیت اوورسیز میں پروان چڑھ رہی ہیں۔ ہمیں ان ممالک کے سیاسی نظام کا بھی حصہ بننا چاہئیے جہاں ہمیں مواقع دستیاب ہیں ۔
پاکستان فریڈم فورم کے ڈاکٹر شفیق نے کہا کہ ہمارے بچے ویسے ہی ملک اور کلچر سے دور ہو رہے ہیں ۔ فیصلہ سازوں کو چاہئیے کہ بیرون ممالک میں پروان چڑھنے والی پاکستانی نسلوں کو ملکی نظام کے ساتھ منسلک رکھنے کے اقدام کریں ۔معروف صحافی و دنیا ٹی وی کے نمائندے معوذ صدیقی نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہامریکہ میں مڈٹرم الیکشن میں پاکستانی کمیونٹی کو ہر ممکن کردار ادا کرنا چاہئیے تھا۔پاکستان لیگ آف امریکہ اور فورم کے رہنما طاہرخان نے کہا کہ پاکستانی قائدین کو امریکہ کے دورے کے دوران ایک ڈربے میں بند ہو کر مخصوص لوگوں سے ملنے کی بجائے کمیونٹی کے حقیقی نمائندوں سے مل کر ان کے مسائل معلوم کرکے ان کے حل کو یقینی بنانا چاہئیے ۔


پاکستان تحریک انصاف نیویارک یوتھ ونگ کے صدر چوہدری پرویز امراءنے کہاکہ تحریک انصاف کے اوورسیز پاکستانیوں کے لئے جو آواز اٹھائی ہے ، اس میں سب کو شامل ہونا چاہئیے ۔انہوںنے کہا کہ اوورسیز کمیونٹٰی کے لئے حقوق اس لئے بھی ضروری ہیں تاکہ ان کی آنیوالی نسلیں نظام کا حصہ بنی رہیں ۔سید قسیم واسطی ایڈوکیٹ نے اوورسیز پاکستانیوں کی پارلیمنٹ میں نمائندگی کی مخالفت کی ۔

 

 

 

تاریخ اشاعت : 2014-11-05 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock