علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کے زیر اہتمام نیویارک کی تاریخ میں پہلی باربروکلین بورو ہال میں عظیم الشان اردو کانفرنس

 

نیویارک (خصوصی رپورٹ) علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کے زیر اہتمام بروکلین (نیویارک) کے بورو ہال میں پہلی اردو کانفرنس منعقد ہوئی جو کہ نیویارک کی تاریخ میں بروکلین بورو ہال میں منعقد ہونیوالی پہلی اردو کانفرنس تھی جس کا موضوع ”اردو کانفرنس ؛ زبانوں کے ذریعے کمیونٹیز کے کردار کو موثر بنانا “ تھا۔بورو ہال میں کانفرنس کے انعقاد کی منظور ی بورو پریذیڈنٹ ایرک ایڈمز نے دی تاہم وہ شہر سے باہر ہونے کی وجہ سے کانفرنس میں شریک نہ ہوسکے ۔ ان کی نمائندگی سینئر ایڈوائزر بورو پریذیڈنٹ محترمہ انگرڈ لیوئس مارٹن نے کی ۔


علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کے چئیرمین ناصر اعوان کی صدارت میں منعقد ہونیوالی کانفرنس کے مہمان خصوصی قونصل جنرل پاکستان راجہ علی اعجاز تھے جبکہ کانفرنس میں کمیونٹی سنٹر کے اردو پروگرام کی ڈائریکٹر محترمہ فوزیہ خان ، سینئر ٹیچر مسز انوری راجپوت، کمیونٹی سنٹر کے سینئر عہدیداران طاہر بھٹہ، شمس الزمان ، شیخ اشفاق کے علاوہ نیویارک سٹیٹ کی اسسٹنٹ کمشنر آف با ئی لنگﺅل ایجوکیشن اند ورلڈ لینگوئج مس انفنٹے گرین ،کمیونٹی بورڈ 14کی مینیجر شان کیمبل ، ممتاز مووی میکر، شاعر و ادیب ممتاز حسین ، سید صفدر حسین شاہ ، اصغر چشتی ، میوزک ٹیچر و پرفارمر ایرک البیسٹر ، پروفیسر ڈاکٹر برنابے روہی ، محقق فاروق علی خان کے علاوہ پاکستانی امریکن کمیونٹی کے والدین اور سکول کے بچوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔ محمد اصغر چشتی نے بارگاہ رسالت ﷺ میں نعت شریف پڑھی جبکہ سید صفدر شاہ نے آخر میں خصوصی دعا کروائی۔ تلاوت کی سعادت راجہ اللہ دتہ نے حاصل کی

 


اردو پروگرام کی ڈائریکٹر فوزیہ خا ن نے کانفرنس کے اغراض و مقاصد بیان کرتے ہوئے کہا کہ علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کے زیر اہتمام بروکلین کے پبلک سکول پی ایس 217میں گذشتہ دو سالوں سے سٹار ٹاک اردو پروگرا م کی مدد سے اردو سمر کیمپ جاری ہے اور اس سال موسم گرما میں بھی تیسرا سمر کیمپ منعقد کیا جا رہا ہے جس میں بچوں کو اردو اور کلچر کے بارے میں پڑھایا اور سکھایا جاتا ہے ۔بوروہال میں کانفرنس کا مقصد والدین اور کمیونٹی کی اہم شخصیات کو یہ بتانا ہے کہ وہ ان مواقع سے فائدہ اٹھائیں اور کانفرنس کا ایک اہم مقصد ہمارے منتخب و اعلیٰ سرکاری حکام سے یہ بھی کہنا ہے کہ اردو سمر کیمپ اور آفٹر سکول جیسے پروگرام کمیونٹی کی ضرورت ہیں اور وہ اس میں ہماری ہر ممکن مدد کریں


چئیرمین ناصر اعوان نے معزز مہمانوں اور شرکاءکو کانفرنس میں خوش آمدید کہتے ہوئے کہاکہ علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کے پلیٹ فارم سے اردو پروگرام کے علاوہ سیفٹی پٹرول اور فیونرل کمیٹی جیسے پراجیکٹ جاری ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ کمیونٹی کی فلاح و بہبود کے ان تمام منصوبوں میں ، میں اپنا کردار ایک سو ایک فیصد رضاکارانہ انداز میں ادا کرتا ہوں ۔ کمیونٹی سنٹر کا مقصد کمیونٹی کو ترقی اور آگے بڑھنے کے مواقع فراہم کرنا ہیں اور اس کام میں ہمیں سب کے تعاون کی ضرورت ہے
قونصل جنرل راجہ علی اعجاز نے علامہ اقبال کمی

ونٹی سنٹر کی انتظامیہ کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ اردو زبان کے فروغ اور کمیونٹی کی خدمت کے حوالے سے ان کا کردار قابل ستائش ہے ۔انہوں نے کہا کہ اردو صرف پاکستان ہی نہیں بلکہ چھ سو ملین لوگوں کے بولنے اور سمجھنے کی زبان ہے ۔ صرف امریکہ میں ایک ملین کے قریب پاکستانی یہ زبان بولتے اور سمجھتے ہیں ۔ اس زبان کے فروغ کی کوششوں کو ہر کسی کو سپورٹ کرنا چاہئیے


شام ازم کے پروفیسر ڈاکٹر بارنابے نے بھی اردو سمیت ایتھنک کمیونٹی کی بولی جانیوالی زبانوں کی اہمیت کے مختلف پہلوو¿ں پر روشنی ڈالی جبکہ اردو زبان کے بارے میں ذاتی حیثیت سے تحقیق کرنے والے فاروق علی نے اردو زبان کے تاریخی پس منظر نہایت دلچسپ انداز میں بیان کرتے ہوئے کہا کہ اردو زبان اور اس میں بولے جانے والے بہت سے الفاظ دنیا کی بہت سی قدیم زبانوں میں ملتے ہیں ۔لہٰذا اردو کو محض لشکری زبان قرار نہیں دیا جس سکتا ، اس کی تاریخ بہت پرانی ہے ۔


پرنسٹن یونیورسٹی نیوجرسی کی اردو و ہندی زبان کی پروفیسر فوزیہ فاروقی نے اپنے بیان خطاب میں کہا کہ اردو اور ہندی بولنے اور سمجھنے میں تقریباً ایک جیسی زبانیں ہیں اور اسے دنیا کے تقریبا ڈیڑھ ارب لوگ بولتے اور سمجھتے ہیں لہٰذا اس زبان کا فروغ بہت ضروری ہے ۔ اس سلسلے میں علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کی جانب سے جو کوششیں کی جا رہی ہیں ، انہیں کمیونٹی کے ساتھ ساتھ لیڈرشپ لیول پر بہت حوصلہ افزائی اور سپورٹ کی ضرورت ہے ۔


نیویارک سٹیٹ کی اسسٹنٹ کمشنر انفنٹے گرین نے خطاب کے دوران کہا کہ نیویارک میں یہ ہدف رکھا گیا ہے کہ یہاں کے ہر بچے کو بائی لنگوئیل یعنی کم از کم دو زبانیںروانی سے بولنے والا ہونا چاہئیے ۔ انہوں نے والدین اور بچوں پر زور دیا کہ وہ علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کے پلیٹ فارم جو جو موقع دستیاب ہو رہا ہے اور ایسے مواقع سے ضرور مستفید ہوں ۔انہوں نے نیویارک میں مختلف پروگراموں کی تفصیل بھی بیان کی ۔


تقریب سے طاہر بھٹہ، شمس الزمان اور شیخ اشفاق نے خطاب کے دوران علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کی جانب سے کانفرنس کو کامیاب بنانے پر بورو ہا ل، والدین ، بچوں اور سپورٹرز کا شکرئیہ ادا کیا ۔ انہوں نے کہا کہ اردو زبان کے فروغ کے سلسلے میں صرف اردو سمر کیمپ کافی نہیں ، اس سلسلے کو مزید بڑھانا چاہئیے ۔ اس سلسلے میں منتخب و اعلیٰ حکام ، کمیونٹی اور والدین ملکر اپنا اپنا کردار اداکریں ۔


سینئر ٹیچر محترمہ انوری راجپوت نے اردو سمر کیمپ اور کیمپ میں شرکت کے بعد والدین اور بچوں کے تاثرات کے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ اردو سمر کیمپ میں جس جس نے بھی شرکت کی ، اس نے اسے ایک مفید پروگرام قرار دیا۔ انوری راجپوت نے کہا کہ نیلسن مینڈیلا نے زبان کی اہمیت کے بارے میں بہت خوبصورت بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ اگر آپ کسی سے اس زبان میں بات کریں کہ جو وہ سمجھتاہے ، تو آپ کی بات اس کے دماغ میں اترے گی اور اگر اس زبان میں بات کرے کہ جو وہ بولتا ہے تو بات دل میں اترے گی ۔تقریب سے امتیاز سید نے خطاب کے دوران علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر اور اس کی انتظامیہ کو کامیاب و تاریخی کانفرنس کے انعقاد پر مبارکباد دی ۔
کانفرنس میں ممتاز حسین نے اپنے نظم لفظ و الفاظ پڑھ کر سنائی اور اس کا انگریزی زبان میں ترجمہ بھی پیش کیا جبکہ ایرک البیسٹر اور فدا حسین کے صاحبزادے نے کلام اقبال پڑھا جسے شرکاءنے بہت سراہا۔ کانفرنس میں کاوش ٹی وی کی جانب سے اردو سمر کیمپ کے بارے میں بنائی گئی مختصر دورانیہ کی ڈاکومنٹری بھی دکھائی گئی ۔


علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر اوربورو ہا ل کی جانب سے فوزیہ فاروقی ، فوزیہ خان، ناصر اعوان، آصف جمال (اے آر وائی )، محسن ظہیر ، ممتاز حسین سمیت دیگر کو ان کی خدمات کے اعتراف کے طور پر ایوارڈز بھی پیش کئے گئے جو کہ مس انگرڈ لوئس مارٹن نے پیش کئے ۔کانفرنس میں انوری راجپوت کی قیادت میں بچوں نے قومی نغموں پر شاندار پرفارمنس کا مظاہرہ بھی کیا۔


کانفرنس میں علامہ اقبال کمیونٹی سنٹر کی جانب سے مختلف مہمانوں کو پاکستانی سندھی اجرک بطور ایک یادگار و تحفے کے طور پر بھی پیش کی گئیں ۔


 

تاریخ اشاعت : 2015-04-07 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں

SiteLock